210

محسن انسانیت ڈاکٹر آصف ہجر کا 1 سال مکمل

Spread the love

تحریر: عنابغ علی آصف
” ہم تمہارے بعد آنے والے ہیں ”
14 جون۔۔۔۔ہجر کا ایک اور سال مکمل ہوا !

زندگی کی پہیلی موت کی صورت میں سلجھ جاتی ہے۔ اس متاع قلیل میں قدم رکھنے والی ہر ذی روح کو اپنے خالق کے حضور لوٹ جانا ہے۔ ہم درحقیقت روح ہیں جو عارضی طور پر انسانی روپ کا تجربہ کر رہے ہیں۔ یہ human experience بالآخر اختتام پذیر ہونا ہی ہے۔

دنیا میں آتے ہی دنیا کی ریس میں دوڑنے کی تیاری اور پھر اس دوڑ میں شامل ہو کر سبقت لے جانے کی تمام تر خواہشات آپ کے دامن سے آ لپٹتی ہیں۔ ماں باپ بہن بھائی کی صورت میں انرجی بوسٹرز آپکا ہمہ وقت پاور بینک ہوتے ہیں۔

انسان کی تخلیق میں سب سے اہم عضو اسکا دل ہے، اس کمبخت کی گردش ہی ہمارے بدن کا ایندھن ہے۔ لیکن اسکو بنانے والے نے اس میں کمال کی پروگرامنگ کر رکھی ہے، یہ محسوس کرنے کی صلاحیت رکھتا ہے، پھر چاہے احساس محبت کا ہو یا نفرت کا، آسائش ہو یا تکلیف، وصل ہو یا پھر ہجر کی نمناک رات، یہ سب کچھ بیک وقت اپنی اپنی شدت سے محسوس کرتا ہے اور یوں اسکی خوشحالی اور زبوں حالی بھی ان احساسات کے رحم و کرم پر منحصر ہو جاتے ہیں۔

احساسات کی بیشتر اقسام میں محبت کو بادشاہی کا ملکہ حاصل ہے اور محبت میں اولیت کا مقام والدین کے قدموں میں سکونت رکھتا ہے۔ انکا وجود آپکی زندگی کا سب سے قیمتی ترین جزو ہے۔ ان میں سے ایک بھی کھو جائے تو زندگی کے سفر میں بھاگنے والا انسان پلک جھپکتے ہی معذور ہو جاتا ہے۔ اور معذوری بھی ایسی کہ جسکا کوئی implant نہیں، جسکا کوئی علاج نہیں ۔

14 جون 2020، ، ، دن چڑھ چکا ہے۔۔۔پاپا اٹھیں۔۔ناشتہ کرنا ہے۔۔۔ڈاکٹر نے کہا ہے کہ بس آج کا دن آپ CPAP ماسک پہ گزاریں گے اور پھر آرام آ جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔آپ ماسک کو پکڑیں میں آپکو ناشتہ کرواتا ہوں۔۔۔۔۔۔ دہی اور بریڈ کے چند نوالے۔۔۔۔ نابی بیٹا بس، اب آپ بھی ناشتہ کرو اور کچھ دیر سو لو (میرے چہرے پر محبت کی حدت سے چُور ہاتھ پھیرتے ہوئے) ۔۔۔۔۔۔۔ کچھ دیر گزرتی ہے۔۔۔۔۔ابا کو اپنی گود میں سینے سے لگا کر سلا دیا ہے۔۔۔خود بھی آنکھ لگا لی ہے۔۔۔۔۔ سہ پہر ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔ آنکھ کھلی ہے۔۔۔۔۔۔۔ نابی بیٹا، گھر نہیں جانا؟؟؟… 😭……جانا ہے نا میری جان۔۔بس کچھ دیر اور پھر آپ ٹھیک ہو جائیں گے۔۔۔۔۔اچھا !…… وقت گزر رہا ہے۔۔۔۔۔اندھیرا چھا رہا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔ہاتھوں میں ہاتھ ہے۔۔۔۔۔۔۔۔نگاہِ الفت میرے چہرے پر مبذول ہے۔۔۔۔۔۔ 8 بجنے کو ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ پلازمہ تیار ہے۔۔۔۔ بس ۔۔۔۔ پلازمہ لگے گا اور سب ٹھیک ہو جائے گا۔۔۔۔۔۔۔۔۔ پاپا یار اٹھیں۔۔پانی پی لیں۔۔پلازمہ لگانا ہے۔۔۔۔۔چند گھونٹ حلق پار کر چکے۔۔۔۔۔۔۔۔ ڈاکٹر صاحب پلازمہ لگا دیں۔۔۔۔ میں آئی سی یو کے بستر کے ساتھ کھڑا کچھ سامان اکٹھا کرنے لگا ہوں کہ آواز آ رہی ہے ۔۔۔۔۔ نابی بیٹا میرے پاس آ جاؤ۔۔۔۔۔پاس بیٹھو۔۔۔۔۔میں بستر پر ساتھ بیٹھ کر اپنی جان کو گود میں لے چکا ہوں۔۔۔۔۔۔۔ ہاتھ کو مضبوطی سے تھاما ہے اور کانوں میں صدا ہے۔۔۔

” بیٹا، حوصلے سے رہنا” 😭۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔.۔۔ پاپا یار آپ چیمپٰن ہیں، انشاءاللہ سب بہتر ہو جائے گا۔! ہاں میں ٹھیک ہوں، بس حوصلے سے رہنا میرا بیٹا !

ڈاکٹر پلازمہ کی سوئی بائیں بازو میں داخل کرتا ہے۔۔۔۔۔۔۔۔رات چھا چکی ہے۔۔۔۔۔۔۔تدبیریں الٹی پڑنے کو ہیں ۔۔۔۔ زندگی کی شام ہونے کو ہے۔۔۔۔زندگی ہاتھوں سے جا رہی ہے۔۔۔۔۔۔
“ڈاکٹر آصف۔۔۔۔آنکھیں کھولیں۔۔۔۔ڈاکٹر آصف۔۔۔۔۔۔۔۔۔ٹوں ٹوں ٹوً ٹوں۔۔۔۔۔۔۔۔monitor پر زندگی کی لکیر سیدھی ہوتی جارہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔ up and down کی ترتیب ہمیشہ کے لیےdown ہو رہی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ڈاکٹر آصف۔۔۔۔۔۔اٹھیں ڈاکٹر آصف۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کوئی ڈاکٹر کو بتائے۔۔۔۔۔۔۔اجل چھا چکا۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ایک ہی پَل میں میرے سینے سے لپٹے میری کائنات میرا وجود میرا یقین میری طاقت میرا آسمان میری سانس سانس میری بینائی۔۔میری سماعت۔۔۔۔۔۔۔میرے ابا جان۔۔۔۔اجل کو قبول کر چکے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔ اپنے خالق کے حضور پیش ہو گئے ہیں ۔۔۔۔۔۔۔دل کو نہ دھڑکنے کا حکم آ چکا ہے۔۔۔۔۔
کرونا کے آئی سی یو میں کوئی نہیں آ سکتا۔۔۔۔۔ میں اکیلا ہوں۔۔اور میری گود میں میری ہی زندگی لے جائی جا چکی ہے۔۔۔۔۔۔۔!
انا لِلہ وانا الیہ راجعون۔۔۔۔………!
میں معذور ہو گیا ہوں۔۔۔۔ابا تو جنت میں منتقل ہوئے۔۔۔۔میں دنیا میں مر چکا ہوں! بس ایک خوشخبری ہے جو روزانہ ابا کے پاس جاتے ہوئے آنکھوں کا رزق بنتی ہے۔۔۔۔۔شہرِ خاموشاں کی دیوار پر چسپ تختی، جس پر مسلم سے منقول یہ درج ہے

“السَّلامُ عَلَيْكُمْ يَا أَهْلَ القُبُورِ، يَغْفِرُ اللَّهُ لَنا وَلَكُمْ، أَنْتُم سَلَفُنا ونَحْنُ بالأَثَرِ”
اے قبر والو تم پر سلامتی ہو۔۔۔۔اللہ تمہاری اور ہماری مغفرت کرے۔۔۔۔۔ تم ہم سے پہلے پہنچ گئے۔۔۔۔۔۔ہم تمہارے بعد آنے والے ہیں ”

ایک سال بیت گیا بابا۔۔۔۔۔۔۔بس یہی ایک خوشخبری بقیہ انسانی سفر کا زادِ راہ ہے!
خدا آپ سے راضی ہوں۔۔۔۔۔ہم جلد ملیں گے۔۔انشاءاللہ !!!!

بس اپنی حالت کچھ یوں ہے۔۔۔۔

جیہڑے دن دا توں مکھ موڑیا
ہاسیاں وی مکھ موڑیا
پیار دے پھل بن کھڑیوں سکے
ایسے پئے وچھوڑے
ہجرو پیڑ اکھاں وچ رڑکے
دکھ دی وانگر پھوڑے
صادق ہنجواں مار کے چھلاں
پلکاں دے بندھ توڑے
جدوں مٹھی نیندیر سوندی اے خدائی
سوں رب دی نہیں اکھ کدے لائی
میں روواں تینوں یاد کر کے
سجنا!!
مینوں تیرے پلیکھے پیندے نیں
مینوں لوک شودائی کہندے نیں
کسے ویلے ہنجو سکدے نہیں
میرے سجنا ہوکے مک دے نہیں
ہاسیاں تو چنگے مینوں لگ دے نےاتھرو
جیڑے تیری یاد وچ وگ دے نے اتھرو
اوندیاں چیتے جدوں گلاں مینوں تیریاں
رس جان اکھاں نال نینداں چناں میریاں
ہورے مک نی اے کدوں اے جدائی
سوں رب دی نہیں اکھ کدے لائی
میں روواں تینوں یاد کر کے

دے کے سانوں اتھرو سوغاتاں جان والیا
کلیاں نہیں لنگ دیاں راتاں جان والیا
سوچاں تیریاں ای جاندیاں مکائی

نیندرے دی پا ساڈے نیناں وچ بلدی
سیک انج آوے جویں اگ دے نے اتھرو
سیکدیاں بال کے اڈیک دیاں لکڑاں
کولیاں دے ونگ میرے مگڑے نے اتھرو
سوں رب دی نہیں اکھ کدے لائی
میں روواں تینوں یاد کر کے

آپکا بیٹا!

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں